147

‘بین الاقوامی تعلقات کا تعارف’ ڈاکٹر فرحان حنیف صدیقی اور محمد ندیم مرزا کی کتاب کی تقریب رونمائی

جامعہ کراچی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات نے حال ہی میں معروف اسکالر ڈاکٹر فرحان حنیف صدیقی اور محمد ندیم مرزا کی مشترکہ تصنیف ‘انٹروڈیوسنگ انٹرنیشنل ریلیشنز’ کے عنوان سے کتاب کی تقریب رونمائی کی میزبانی کی۔
خیرمقدمی کلمات میں، جامعہ کراچی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کے چیئرمین ڈاکٹر نعیم احمد نے کتاب کے مصنفین کے ساتھ ساتھ اسکالرز، پروفیسرز، ماہرین تعلیم، فیکلٹی، اور حاضرین طلبہ کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کی۔ ڈاکٹر احمد نے کتاب کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے اسے بین الاقوامی تعلقات کے میدان میں موجودہ ادب میں ایک اہم اضافہ قرار دیا۔
ڈاکٹر نعیم احمد نے ڈاکٹر فرحان اور محمد ندیم مرزا کو ایک شاندار کتاب تیار کرنے پر دلی مبارکباد پیش کی جو بین الاقوامی تعلقات کے نظم و ضبط کے لیے ایک جامع تصوراتی اور نظریاتی بنیاد فراہم کرتی ہے۔ اس کی غیر معمولی قدر کو تسلیم کرتے ہوئے، انہوں نے زور دے کر کہا کہ یہ کتاب نہ صرف انڈر گریجویٹ طلباء کے لیے ایک اہم نصابی کتاب ہے بلکہ سینئر اور پوسٹ گریجویٹ امیدواروں کے لیے بھی ایک قیمتی ذریعہ ہے۔ ڈاکٹر احمد نے اس بات پر زور دیا کہ موجودہ ادب میں کتاب کی شراکت خاص طور پر عالمی جنوب کے تناظر میں قابل ذکر ہے۔
تقریب رونمائی میں مقررین نے نہ صرف کتاب میں پیش کیے گئے تصوراتی فریم ورک کی اہمیت کو تسلیم کیا بلکہ پاکستان اور عالمی جنوب سے جڑے مسائل پر بحث کی اہمیت کو بھی اجاگر کیا۔ کتاب کے مواد پر تنقیدی جائزہ پیش کرتے ہوئے، جامعہ کراچی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کی اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر نوشین وصی نے کہا کہ یہ کتاب بین الاقوامی تعلقات میں نظریہ اور عمل کے درمیان فرق کو مؤثر طریقے سے ختم کرتی ہے، اور ایک مشترکہ چیلنج سے نمٹتی ہے۔ ابتدائی سطح پر طلباء کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ علمی کام نہ صرف طلباء کو پورا کرتا ہے بلکہ سی ایس ایس کے خواہشمندوں کو بھی فائدہ پہنچاتا ہے۔ کتاب میں شامل تاریخی اسباق پر زور دیتے ہوئے، ڈاکٹر وصی نے اس یقین کا اظہار کیا کہ وہ مستقبل کی سیاسی پیش رفت کو بہتر طور پر سمجھنے میں اپنا حصہ ڈالتے ہیں۔ انہوں نے کتاب کے اردو ترجمے کی ضرورت کی تجویز بھی پیش کی۔
آئی بی اے کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر سید اکبر زیدی نے عالمی جنوب کے تناظر میں اپنی گفتگو کے ذریعے بین الاقوامی تعلقات کو سمجھنے کی ضرورت پر زور دیا۔ ڈاکٹر زیدی نے نہ صرف مغربی تناظر کو پڑھنے کی اہمیت پر زور دیا بلکہ عالمی جنوب کے نقطہ نظر کو منتخب کرنے اور اس کا تجزیہ کرنے کی بھی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے عالمی سیاست کے بارے میں ہماری تفہیم کی تشکیل میں متنوع نقطہ نظر کی اہمیت کو اجاگر کیا کہ مختلف جنس بین الاقوامی تعلقات کو کس طرح سمجھتے ہیں۔
جامعہ کراچی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کے سابق چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر سکندر مہدی نے گفتگو کو مؤثر طریقے سے کور کرنے پر مصنفین کی تعریف کی۔ انہوں نے اہم موضوعات پر قومی نقطہ نظر کے ساتھ کتاب شائع کرنے کی اہمیت پر زور دیا اور اسے بین الاقوامی تعلقات کی گفتگو میں ایک قابل قدر شراکت قرار دیا۔ ڈاکٹر مہدی نے جنوبی نقطہ نظر سے بین الاقوامی تعلقات پر کتاب کی اشاعت کا خیر مقدم کیا۔ خاص طور پر، انہوں نے کتاب کی مضبوط نظریاتی بنیاد کی تعریف کی اور پاکستان میں بین الاقوامی تعلقات کی پہلی نصابی کتاب کے طور پر اس کی بنیادی نوعیت پر روشنی ڈالی جس میں تنازعات کے حل اور امن کے مطالعے، غیر ریاستی عناصر، ماحولیاتی انحطاط اور ان کے کردار کی بدلتی ہوئی نوعیت کے باب شامل ہیں۔
ڈاکٹر فرحان حنیف صدیقی، اسکول آف پولیٹکس اینڈ انٹرنیشنل ریلیشنز، قائداعظم یونیورسٹی، اسلام آباد کے ایسوسی ایٹ پروفیسر اور کتاب کے مصنف، نے بتایا کہ اس کی تخلیق طلبہ کو ایک جامع تعلیمی تجربہ فراہم کرنے کے ارادے سے کارفرما ہے جس میں سیکھنا اور آزاد تنقیدی سوچ دونوں کو فروغ دینا شامل ہے۔ بین الاقوامی تعلقات کی تعلیم دینے کے اپنے تجربے کی عکاسی کرتے ہوئے، ڈاکٹر صدیقی نے اس موضوع کے بارے میں طلباء کے نقطہ نظر میں نمایاں فرق کی نشاندہی کی۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ یونیورسٹی کی سطح پر، گفتگو اکثر مغربی نقطہ نظر سے مثالوں کے گرد گھومتی ہے، جبکہ کتاب جان بوجھ کر جنوبی ایشیا اور پاکستان کی مثالیں کھینچتی ہے۔ ہمارے خطے کے اندر نظریات اور تصورات کو سیاق و سباق کے مطابق بنا کر کتاب کا مقصد موضوع کی باریک بینی سے تفہیم فراہم کرنا ہے۔ ڈاکٹر فرحان نے مختلف اصطلاحات اور موضوع کے تصورات پر تصوراتی وضاحت پیش کرنے میں کتاب کے کردار پر روشنی ڈالی۔ مزید برآں، انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کتاب کو سوچ سمجھ کر ڈیزائن کیا گیا ہے تاکہ طلباء کو تنقیدی سوچ میں مشغول ہونے اور بین الاقوامی تعلقات کے شعبے میں ان کی دلچسپی کو فروغ دیا جا سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں