55

گلگت سے مبینہ طور پر اغواء کی گئی 13 سالہ کمسن بچی کی بازیابی کے لیے احتجاجی مظاہرہ

گلگت بلتستان کی سول سوسائٹی، بچوں کے حقوق کی تنظیمیں، انسانی حقوق کمیشن آف پاکستان، وکلاء برادری، صحافی برادری اور سیاسی جماعتوں کے نمائندوں نے اسلام آباد میں نیشنل پریس کلب کے باہر 13 سالہ کمسن بچی کی فوری بازیابی کا مطالبہ کیا۔ ضلع گلگت کے گاؤں سلطان آباد کی بچی پچھلے 54 دنوں سے لاپتہ ہے اور غریب والدین در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں۔
مظاہرین نے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے شفاف تحقیقات کا مطالبہ کیا کہ ایسے واقعات دوبارہ رونما نہ ہوں۔
چائلڈ پروٹیکشن ورکرز نے اس صورتحال میں خیبر پختونخوا چائلڈ رائٹس کمیشن کے کردار پر سوال اٹھائے کیونکہ صوبہ کے پی کے ضلع مانسہرہ میں بچوں کی شادی کے غیر قانونی فعل کو سراہا گیا۔ مزید برآں، ملزم نے پشاور ہائی کورٹ میں راہداری ضمانت کے لیے بھی درخواست دی تھی، جس کے تحت کے پی چائلڈ رائٹس کمیشن کے لیے بچے کی تحقیقات، جواب اور بازیابی کو لازمی قرار دیا گیا تھا۔
13 سالہ بچی کے اغوا کاروں کی جانب سے سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ویڈیوز سے پتہ چلتا ہے کہ اس کی شادی ایک 17 سالہ نابالغ سے ہوئی ہے، جس نے ابھی تک شادی کی قانونی عمر حاصل نہیں کی جیسا کہ چائلڈ میرج ریسٹرینٹ ترمیمی ایکٹ 1929 میں طے کیا گیا ہے۔
سول سوسائٹی کی تنظیمیں دونوں بچوں کی جلد بازیابی کا مطالبہ کرتی ہیں کیونکہ ان غیر قانونی کارروائیوں کے پیچھے یہ دونوں تشدد اور استحصال کی اور بھی زیادہ شکلوں کا شکار ہیں۔
پریس کلب میں مقررین کے اہم مطالبات سامنے آئے ہیں کہ :
01- بچی کو فوری طور پر بازیاب کروائیں اور اسے عدالت کے سامنے پیش کریں۔
02- بچی کی عمر کے تعین کے لیے مستند طبی اور قانونی طریقے استعمال کیے جائیں۔
03⁠- نکاح پڑھنے والے اور رجسٹرار کے طرز عمل کی چھان بین کریں۔
⁠04- ڈاکٹر سے تفتیش کی جائے کہ اس نے بچی کی عمر کا تعین اور سرٹیفکیٹ کس بنیاد پر جاری کیا۔
⁠05- احتساب کو یقینی بنانے کے لیے بعض پولیس اہلکاروں کے خلاف بچے کے والدین کی جانب سے لگائے گئے سنگین الزامات کی شفاف تحقیقات کرائی جائیں۔
⁠06- ایسے واقعات کی روک تھام کے اقدامات کی نشاندہی کرنے کے لیے قانونی اور انتظامی انتظامات کا جائزہ لیں تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ مستقبل میں ایسے واقعات دوبارہ رونما نہ ہوں۔
07-⁠ تحقیقات کریں کہ ایف آئی آر درج کرنے کے باوجود پولیس کوئی قابل اعتبار کارروائی کیوں نہیں کر سکی۔
ہائی کورٹ پشاور کو اس مجسٹریٹ کے خلاف 08-A جوڈیشل انکوائری شروع کرنی چاہیے جس نے سیکشن 164 سی آر پی سی کے تحت متاثرہ کا بیان لیا ہے۔
میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مقررین نے اسے بچوں کے اغوا، بچوں کی اندرونی سمگلنگ، بچوں کی کم عمری میں جبری شادی اور بچوں سے جنسی زیادتی کا کیس قرار دیا۔
مظاہرین نے واقعے کے 54 دن گزرنے کے باوجود گلگت بلتستان پولیس کی جانب سے بچے کی بازیابی میں ناکامی پر گہری تشویش کا اظہار کیا۔
بچے کے والد نے کہا ہے کہ اس کی 13 سالہ بیٹی کو اس کے مذہبی، سماجی اور قانونی اصولوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اس کی رضامندی کے بغیر ’اغوا اور شادی کر دی گئی‘۔ اس نے جواب دیا کہ وہ تھانے جاتے رہے، لیکن ایف آئی آر کے اندراج میں توقع سے زیادہ وقت لگا۔
اگرچہ واقعے کی پہلی اطلاع 20 جنوری 2024 کو دنیور تھانے، گلگت کی حدود میں درج کی گئی تھی، لیکن پولیس بچے کو بازیاب کرانے اور عدالت میں پیش کرنے میں ناکام رہی ہے۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ شکایت کنندہ سخی احمد جان نے کچھ پولیس اہلکاروں کے خلاف سنگین الزامات عائد کیے ہیں جن کی درست طریقے سے تحقیقات کی ضرورت ہے تاکہ علاقے میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے احتساب کو یقینی بنایا جا سکے۔
مظاہرین کا یہ بھی کہنا تھا کہ اگر متعلقہ محکمے صورتحال کو حل کرنے کے لیے مداخلت نہیں کریں گے تو یہ مسئلہ عوام میں بدامنی کا باعث بن سکتا ہے۔
مظاہرین نے متاثرہ خاندان کو انصاف کی فراہمی تک اپنی جدوجہد جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

گلگت سے مبینہ طور پر اغواء کی گئی 13 سالہ کمسن بچی کی بازیابی کے لیے احتجاجی مظاہرہ” ایک تبصرہ

  1. Wow, superb weblog layout! How lengthy have you been running a blog for? you make running a blog look easy. The whole glance of your site is excellent, as neatly as the content material! You can see similar here sklep online

اپنا تبصرہ بھیجیں